بھارت کو فیصلہ کن میچ میں جنوبی افریقا کے ہاتھوں عبرتناک شکست

جنوبی افریقا کے 438 رنز کے جواب میں بھارتی ٹیم 224 رنز پر پویلین لوٹ گئی۔

جنوبی افریقا کے 438 رنز کے جواب میں بھارتی ٹیم 224 رنز پر پویلین لوٹ گئی۔

ممبئی: جنوبی افریقا نے بھارت کو پانچویں اور آخری ایک روزہ میچ میں 214 رنز سے شکست دے کر سیریز 2-3 سے اپنے نام کرلی

ممبئی کے وینکھڈے اسٹیڈیم میں کھیلے گئے میچ میں جنوبی افریقا نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ 50 اوورز میں 4 وکٹوں کے نقصان پر 438 رنز بنائے جس میں تین بلے بازوں کی جانب سے شاندار سنچریاں بھی شامل ہیں۔ ہدف کے تعاقب میں میزبان بھارت نے جارحانہ انداز اپنانے کی کوشش کی لیکن وقفے وقفے سے وکٹیں گرتی چلی گئیں اور پوری ٹیم 35.5 اوورز میں 224 رنز پر پویلین لوٹ گئی۔ بھارت کی جانب سے اجنکایا ریہانے 87 اور شیکر دھاون 60 رنز کے ساتھ نمایاں بلے باز رہے جب کہ دیگر کھلاڑیوں میں کپتان مہندرا سنگھ دھونی 27،  روہت شرما 16، ویرات کوہلی 7، سریش رائنا 12، ایکزر پٹیل 5 رنز، بھونیشور کمار ایک اور ہربھجن سنگھ  بغیر کوئی رنز بنائے آؤٹ ہوئے۔ جنوبی افریقا کی جانب سے کگیسو رابادا نے 4، ڈیل اسٹین 3، عمران طاہر 2 اور کائل ایبٹ نے ایک وکٹ حاصل کی۔

جنوبی افریقا کے کپتان اے بی ڈیولیئرز نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا جو درست ثابت ہوا اور مہمان ٹیم نے بھارتی بلے بازوں کی جم کر پٹائی کرتے ہوئے 4 وکٹوں کے نقصان پر 438 رنز بنائے۔ اوپنر ڈی کاک اور ہاشم آملہ نے اننگز کا آغاز کیا تو ہاشم آملہ 23 رنز بناکر موہت شرما کی گیند پر آؤٹ ہوگئے جب کہ ڈوپلیسی اور ڈی کاک نے شاندار بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے گراؤنڈ میں چھکوں چوکوں کی بارش کردی تاہم 187 کے مجموعی اسکور پر ڈی کاک 109 رنز بنا کر سریش رائنا کا شکار بنے۔ جس کے بعد تیسری وکٹ پر فاف ڈپلوسی اور کپتان اے بی ڈیویلئرز کے درمیان 164 رنز کی شراکت قائم ہوئی اور ٹیم کا مجموعہ 351 تک پہنچا تو فاف ڈپلوسی 166 رنز بنا کر زخمی ہوگئے جب کہ انہوں نے اپنی اننگز میں 6 چھکے اور 9 چوکے لگائے۔

بھارتی بلے باز تیزی سے آگے بڑھتے اسکور کو روکنے کے لئے ہر گر اپناتے رہے لیکن ڈی کاک اور ڈپلوسی کے بعد کپتان ڈیولیئرز کا بلا رنز اگلتا رہا اور ڈویلئرز نے بلے بازوں پر کوئی رحم نہ کیا اور خوب دھلائی کی ، 47ویں اوور میں ڈیویلئرز 11 چھکوں اور 3 چوکوں کی مدد سے 61 گیندوں پر 119 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے جب کہ فرحان بہاردین 16 رنز بنا سکے، ڈیوڈ ملر 22 اور ڈین ایلگر 5 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔ بھارت کی جانب سے بھونیشور کمار، موہت شرما،سریش رائنا اور ہربھجن سنگھ نے ایک ایک وکٹ حاصل کی۔

واضح رہے کہ ایک روزہ کرکٹ میں کسی بھی ٹیم کی جانب سے سب سے زیادہ  دیا جانے والا ہدف 443 رنز ہے جو 2006 میں سری لنکا نے ہالینڈ کے خلاف بنایا تھا اورمارچ 2006 میں ہی جنوبی افریقن ٹیم جوہانسبرگ میں آسٹریلیا کے خلاف 438 رنز بنا چکی ہے۔

بورڈ نے ریکارڈ ساز یونس خان کو خالی مبارکباد پر ٹرخا دیا

سینئر بیٹسمین پاکستان کرکٹ کے شاندار سفیر ہیں، قوم کوکارناموں پر فخر ہے،چیئرمین

سینئر بیٹسمین پاکستان کرکٹ کے شاندار سفیر ہیں، قوم کوکارناموں پر فخر ہے،چیئرمین

ابو ظبی:  پی سی بی نے ریکارڈ ساز یونس خان کو خالی مبارکباد پر ٹرخا دیا، انعام سے نوازنے کا فیصلہ بعد میں کیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق یونس خان نے آف سپنر معین علی کو چھکا جڑ کر جاوید میانداد کا پاکستان کیلیے سب سے زیادہ ٹیسٹ رنز کا ریکارڈ توڑ دیا لیکن اس سنگ میل کو عبور کرنے پر پی سی بی کی جانب سے کسی انعام کا اعلان کرنے کے بجائے صرف مبارکباد اور چند تعریفی جملوں کو کافی خیال کیا گیا ہے۔

دورۂ سری لنکا مکمل ہونے کے بعد ہی اس بات کا قوی امکان تھا کہ یونس خان انگلینڈ  کیخلاف ابوظبی ٹیسٹ میں یہ کارنامہ سرانجام دے دینگے تاہم بورڈ کی طرف سے پذیرائی کیلیے کوئی خصوصی پروگرام تشکیل دینے یا اپنے طور پر انعامی رقم طے کرنے کی ضرورت محسوس نہیں کی گئی۔

 سینئر بیٹسمین کیلیے انعام کا فیصلہ بعد میں کیا جائے گا، پی سی بی کی جانب سے جاری کردہ پریس ریلیز میں چیئرمین پی سی بی شہریار خان کا جو پیغام جاری کیا گیا اس میں کہا گیاکہ یونس خان پاکستان کرکٹ کے شاندار سفیر ہیں۔ انھوں نے ریکارڈزکے ڈھیر لگادیے جو پوری قوم کیلیے بڑے فخر کی بات ہے، انھیں 22سال کے طویل عرصے بعد جاوید میانداد کا سب سے زیادہ رنز کا سنگ میل عبور کرنے پر مبارکباد پیش کرتے ہیں، امید ہے کہ اسی انداز میں ملک کی خدمت کا سلسلہ جاری رکھیں گے۔ پی سی بی کی ایگزیکٹیو کمیٹی کے چیئرمین نجم سیٹھی اور چیف آپریٹنگ آفیسر سبحان احمدنے بھی سینئر بیٹسمین کو سراہا۔

تحریک انصاف ملک میں د نگا فساد چاہتی ہے، چوہدری نثار

تحریک انصاف میڈیا، قوم اور حکومت کا وقت ضائع کررہی ہے، وفاقی وزیر داخلہ

تحریک انصاف میڈیا، قوم اور حکومت کا وقت ضائع کررہی ہے، وفاقی وزیر داخلہ

اسلام آباد: وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثار علی کا کہنا ہے کہ تحریک انصاف ملک میں دنگا فساد چاہتی ہے جب کہ ہر بات پر محاذ آرائی کی سیاست پاکستان کے مفاد میں بہتر نہیں ہے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کی جانب سے این اے 122 میں ووٹ ادھر ادھر کرنے پر نادرا کے حوالے سے روایتی تنقید سامنے آئی ہے جب کہ تحقیقات میں پتا چلا کہ 26 اگست کے بعد ووٹرلسٹوں میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ ووٹرزکا حلقہ تبدیل کرنے کے لیے نادارا کا کوئی کردار نہیں ہوتا، کسی بھی فرد کا ووٹ بغیر درخواست کے تبدیل نہیں کیا جاسکتا اور ووٹنگ کا حلقہ تبدیل کرنے کے لیے الیکشن کمیشن کو درخواست دینا پڑتی ہے جب کہ این اے 122 میں 25 ہزار 900 ووٹرز اور حلقہ 120 میں 23 ہزار ووٹرزکا اضافہ ہوا اور نادرا مسلم لیگ (ن) کا ادارہ نہیں ہے خدارا اسے سیاست سے الگ رکھا جائے۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ تحریک انصاف کے الزامات کا مقصد سیاسی ہوتا ہے اور وہ ملک میں دنگا فساد چاہتی ہے، ہر بات پر محاذ آرائی کی سیاست پاکستان کے مفاد میں بہتر نہیں، کاش پی ٹی آئی کی قیادت کھل کر شکست تسلیم کرنا سیکھ لے۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی قیادت کا مقصد دنگا فساد اور گالم گلوچ نہیں ہوتا، تحریک انصاف میڈیا، قوم اور حکومت کا وقت ضائع کررہی ہے حالانکہ این اے 122 میں عمران خان کے کیمرے لگانے سے لے کر فوج کی تعیناتی تک ہر مطالبے کو تسلیم کیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر سیاسی جماعتیں ایسا کریں گی تو پھر ملک میں کیسی جمہوریت، جب کہ جب کہ امید کرتا ہوں تحریک انصاف پہلے تولے گی پھر بولے گی۔

وفاقی وزیرداخلہ کا کہنا تھا کہ خطے سے دہشت گردی ختم کرنے کے لیے مکمل تیار ہیں اور ضرب عضب سے متعلق وزارت داخلہ اور ملٹری میں رابطہ ہے جب کہ جی ایچ کیو سے رابطے کے لیے وزارت دفاع کی ضرورت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے منہ بولے دوست بھی دشمنوں کی زبان بولتے ہیں جب کہ داعش عرب ممالک میں ہے، یہاں موجود لوگ نام استعمال کرسکتے ہیں اور کسی گروپ کا داعش سے رابطہ بھی ہوسکتا ہے۔

وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثار نےاصغر خان کیس کے حوالے سے انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ  وزیراعظم نے از خود ایف آئی اے کو بیان رکارڈ کرا دیا ہے تاہم کچھ سابق فوجیوں سے بیان لینے میں مشکلات ہیں۔

این اے 122ضمنی انتخاب؛ ایاز صادق لاہور کے لاڈلے بن گئے

مسلم لیگ (ن) کے سردار ایاز صادق اور تحریک انصاف کے علیم خان کے درمیان سخت مقابلے کی توقع ہے

مسلم لیگ (ن) کے سردار ایاز صادق اور تحریک انصاف کے علیم خان کے درمیان سخت مقابلے کی توقع ہے

لاہور: قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 122 میں ضمنی انتخاب کے خیرحتمی اور غیرسرکاری نتائج کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے امیدوار سردار ایاز صادق 75 ہزار 287 ووٹ لے کر کامیاب ہوگئے۔

قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 122 اور 144 میں ضمنی انتخاب کے لئے ووٹنگ کا عمل صبح 8 بجے شروع ہوا جو بلا تعطل شام 5 بجے تک جاری رہا۔ لاہور کے حلقہ این اے 122 کے غیرحتمی اورغیرسرکاری نتائج کے مطابق (ن) لیگی امیدوارایازصادق 75 ہزار287 ووٹ لے کر کامیاب ہوگئے جب کہ ان کے مد مقابل تحریک انصاف کے امیدوار 71 ہزار 256 ووٹوں کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہے اور عددی حیثیت سے ایاز صادق نے علیم خان کو 4 ہزار 31 ووٹوں سے شکست ہوئی۔ دوسری جانب اوکاڑہ کے حلقہ این اے 144 کے تمام پولنگ اسٹیشنز کے غیرسرکاری اور غیرحتمی نتائج کے مطابق آزاد امیدوار ریاض الحق نے کامیابی حاصل کرلی۔ ریاض الحق 81 ہزار240 ووٹ حاصل کرکے کامیاب ہوئے جب کہ ان کے مخالف مسلم لیگ (ن) کے امیدوارعلی عارف 42 ہزار50 ووٹ حاصل کرسکے ، مجموعی طور پر (ن) لیگ کے امیدوار کو 39 ہزار190 ووٹوں سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ انتخابی دوڑ میں تحریک انصاف کے امیدواراشرف سوہنا صرف 7 ہزار105 ووٹ ہی حاصل کرسکے۔

این اے 122 لاہور میں رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد 3 لاکھ 47 ہزار 762 ہے جس میں سے مرد ووٹرز کی تعداد ایک لاکھ 90 ہزار 328 ہے، حلقے میں 284 پولنگ اسٹیشنز قائم کئے گئے جس میں سے 80 کو حساس قرار دیا گیا گیا۔ تمام پولنگ اسٹیشنز پر فوجی اہلکار تعینات کئے گئے جب کہ  5 ہزار پولیس اہلکاروں نے بھی ڈیوٹی کے فرائض سرانجام دیئے۔ الیکشن ڈیوٹی کے لئے پولیس نے 38 مقامات پر ناکہ بندی کی۔ لاہور ہی میں پی پی 147 میں بھی ضمنی انتخاب کے لئے پولنگ ہوئی جس کے لئے (ن) لیگ کے محسن لطیف اور تحریک انصاف کے شعیب صدیقی کے درمیان کڑا مقابلہ ہے۔

الیکشن کمیشن نے تمام پولنگ اسٹیشنز پر سی سی ٹی وی کیمرے نصب کئے اور صوبائی مرکزی آفس میں کنٹرول روم بھی قائم کیا جس کی نگرانی صوبائی چیف الیکشن کمشنر نے کی جب کہ اسلام آباد میں قائم کئے گئے کنٹرول روم کی نگرانی چیف الیکشن کمشنر اور سیکرٹری الیکشن کمیشن نے کی۔

ضمنی انتخاب کے دوران لاہور کے علاقے بستی سیداں شاہ اپر مال روڈ پر پولیس کی موجودگی میں (ن) لیگ اور تحریک انصاف کے کارکن آپس میں گھتم گھتا بھی ہوئے، ایک دوسرے پر لاتوں اور مکوں کی برسات کی گئی، کرسیاں چلائی گئیں اور مخالفین کے بینرز اکھاڑ دیئے گئے۔ تحریک انصاف کے مشتعل کارکنوں نے (ن) لیگ کا پولنگ کیمپ اکھاڑ کر پھینک دیا تاہم فوجی جوانوں کی آمد کے بعد حالات قابو میں آ گئے اور دونوں جماعتوں کے کارکن اپنے اپنے کیمپوں میں چلے گئے۔ پی ٹی آئی اور تحریک انصاف کے کارکنوں کے درمیان تصادم پولنگ بوتھ نمبر 89، 90، 91، 92 اور 95 پر ہوا تاہم اس سارے عمل کے باوجود پولنگ کا عمل بلا تعطل جاری رہا۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما ایاز صادق نے شیخ سردار ہائی اسکول گڑھی شاہو میں اپنا ووٹ کاسٹ کیا،اس کے علاوہ گڑھی شاہو میں (ن) لیگ اور تحریک انصاف کے امیدواروں کی گاڑیاں آمنے سامنے آنے پر دونوں جماعتوں کے کارکنان نے ایک دوسرے کے خلاف نعرے بازی کی جب کہ سمن آباد کے علاقے میں بھی دونوں جماعتوں کے کارکنان کے درمیان ہاتھا پائی دیکھنے میں آئی۔

این اے 122 لاہور میں مسلم لیگ (ن) کے سردار ایاز صادق اور تحریک انصاف کے علیم خان کے درمیان سخت مقابلے کی توقع ہے جب کہ پیپلزپارٹی کے عامر حسین بھی اس حلقے سے میدان میں ہیں۔ اس کے علاوہ این اے 144 اوکاڑہ میں بھی ضمنی انتخابات کے لئے بھی ووٹنگ ہوئی، اوکاڑہ میں میں مسلم لیگ (ن) کے رہنما علی عارف چوہدری اور آزاد امیدوار چوہدری ریاض کے درمیان مقابلہ ہوگا جب کہ اس حلقے سے اشرف سوہنا تحریک انصاف کی نمائندگی کر رہے ہیں۔

ضمنی انتخابات میں دلہا اور دلہن شادی چھوڑ کر ووٹ ڈالنے پہنچ گئے

ووٹ کی اہمیت بہت زیادہ ہے اوریہ پہلے سے ہی ارادہ تھا کہ ووٹ دالنے ضرورجانا ہے،دلہن

ووٹ کی اہمیت بہت زیادہ ہے اوریہ پہلے سے ہی ارادہ تھا کہ ووٹ دالنے ضرورجانا ہے،دلہن

لاہور / اوکاڑہ: ضمنی انتخابات کے لیے دلہا بارات چھوڑ کر ووٹ ڈالنے کے لیے پولنگ اسٹیشن پہنچ گیا جب کہ مایوں کے کپڑوں میں ملبوس دلہن بھی ووٹ ڈالنے کے لئے پولنگ اسٹیشن پہنچ گئی۔

 ضمنی انتخابات کی گہما گہمی عروج پرہے جہاں بچے، بڑے اوربوڑھے سب ہی پرجوش دکھائی دے رہے ہیں وہیں لاہورمیں این اے 122 کے ضمنی انتخاب میں عامر خان نامی دلہا پھولوں سے سجی گاڑی پر اہل خانہ کے ہمراہ ووٹ ڈالنے پہنچے اور اپنا ووٹ کاسٹ کیا۔ اس موقع پردلہا کا کہنا تھا کہ انہوں نے پہلے ہی سوچ لیا تھا کہ وہ ووٹ ڈالنے کے بعد ہی بارات لے کر جائیں گے۔ دولہا کا مزید کہنا تھا کہ جس طرح ان کی زندگی میں شادی کے بعد تبدیلی آنے والی ہے بالکل اسی طرح وہ تحریک انصاف کو ووٹ دے کر اپنے حلقے میں بھی تبدیلی کے خواہاں ہیں۔

دوسری جانب اوکاڑہ میں این اے 144 میں ضمنی انتخاب کیلئے پولنگ جاری ہے جہاں رخصتی سے قبل مایوں کے کپڑوں میں ملبوث چاندنی نامی دلہن بھی اپنا ووٹ ڈالنے آئی۔ اس موقع پردلہن کا کہنا تھا کہ رخصتی تو ہو جائے گی لیکن ووٹ کی اہمیت بہت زیادہ ہے اوریہ پہلے سے ہی ارادہ تھا کہ ووٹ دالنے ضرورجانا ہے۔ دلہن کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کے رہنما اشرف سوہنا نے حلقے میں کسانوں کیلئے بہت اچھے کام کئے اس لئے ہم انہیں ووٹ دینے آئیں۔

این اے 122لاہور پاکستان تحریک انصاف کوعوامی تحریک اور جما عت اسلامی کی حما یت حاصل

gunda fina;l

جما عت اسلامی کے بعد پاکستان عوامی تحریک نے بھی این اے 122میں تحریک انصاف کی حمایت کا اعلان کر دیا۔ جس کے باعث دیکھا جا سکتا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کا پلڑہ بھا ری ہے۔ 11اکتوبر کواین اے 122میں ایک بڑا معرکہ ہو نے جا رہا ہے۔

این اے 122ضمنی انتخاب تحریک انصاف کو بڑی کامیابی مل گئی

kamiyabi

این اے 122ضمنی انتخابمیں تحریک انصاف کو بڑی کامیابی مل گئی۔ لاہو ر کے این اے 122میں ضمنی انتخابات میں پاکستان تحریک انصاف کو جما عت اسلامی کی حمایت حاصل ہو گئی ہے جس بنا ءپر کہا جا سکتا ہے کہ پی ٹی آئی کو ایک بڑی کامیابی مل گئی ہے

شجا ع خانزادہ قتل کیس میں ملزم قاسم کا اہم انکشاف

خود کش بمبار کو موٹر سائیکل پر ڈیرے پر پہنچایا گیا، قاسم معاویہ

خود کش بمبار کو موٹر سائیکل پر ڈیرے پر پہنچایا گیا، قاسم معاویہ

لاہور: شجاع خانزادہ پرخودکش حملے کے ملزم قاسم معاویہ نے تفتیش کےدوران انکشاف کیا ہے کہ وزیر داخلہ پنجاب کو 6 اگست کو بھی ان کے ڈیرے پر ہی نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی تھی۔

ذرائع کے مطابق وزیرداخلہ پنجاب کرنل ریٹائرڈ شہید شجاع خانزادہ کے ڈیرے پرحملے میں ملوث قاسم معاویہ نے دوران تفتیش مزید انکشاف کئے ہیں، اس نے بتایا ہے کہ خودکش حملے کے لئے زیادہ مدد دہشت گردوں کے مقامی ساتھیوں نے کی تھی، خود کش بمبار کو موٹر سائیکل پر ڈیرے پر پہنچایا گیا اور دہشت گرد نے اپنی موٹر سائیکل ڈیرے پر ہی چھوڑدی تھی۔

قاسم معاویہ کا کہنا تھا کہ انہوں نے شجاع خانزادہ کو 6 اگست کو بھی ان کے ڈیرے پر ہی نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی تھی ، اس سلسلے میں خودکش حملہ آور کو بھی ان کے ڈیرے پر پہنچادیا گیا تھا لیکن شجاع خانزادہ اس سے پہلے ہی ڈیرے سے جاچکے تھے۔

واضح رہے کہ 17 اگست کو اٹک میں شجاع خانزادہ کے ڈیرے پر خود کش حملہ کیا گیا تھا جس کے نتیجے میں ان سمیت 18 افراد جاں بحق ہوگئے تھے۔

داعش القاعدہ سے بڑا خطرہ ہے لیکن اس کا سایہ بھی پاکستان پر نہیں پڑنے دیں گے، آرمی چیف

داعش سے نمٹنا امریکا کے نائن الیون کے بعد القاعدہ سے نمٹنے سے بھی بڑا چیلنج ہے، جنرل راحیل شریف

داعش سے نمٹنا امریکا کے نائن الیون کے بعد القاعدہ سے نمٹنے سے بھی بڑا چیلنج ہے، جنرل راحیل شریف

راولپنڈی / لندن: آرمی چیف جنرل راحیل شریف کا کہنا ہے کہ داعش القاعدہ سے بڑا خطرہ ہے لیکن اس کا سایہ بھی پاکستان پر نہیں پڑنے دیں گے۔

آرمی چیف راحیل شریف 3 روزہ دورہ برطانیہ کے بعد وطن واپس پہنچ  گئے۔ آرمی چیف نے اپنے دورے کے دوران وزیر خارجہ اور وزیر داخلہ سمیت اعلیٰ برطانوی سول و فوجی حکام سے سے ملاقاتیں کیں اور برطانیہ کی تھرڈ آرمڈ ڈویژن کا دورہ کیا۔ علاوہ ازیں آرمی چیف نے رائل یونائیٹڈ سروسز انسٹی ٹیوٹ فار ڈیفنس اور سیکیورٹی اسٹڈیز میں خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ داعش القاعدہ سے بڑا خطرہ ہے لیکن اس کا سایہ بھی پاکستان پر نہیں پڑنے دیں گے۔

انھوں نے کہا کہ اسلام آباد میں کچھ لوگ داعش سے وفاداری کا اظہار کرنا چاہتے ہیں، اس لیے یہ بہت خطرناک صورتحال ہے اور اس سے نمٹنا امریکا کے نائن الیون کے بعد القاعدہ سے نمٹنے سے بھی بڑا چیلنج ہے، القاعدہ بڑا نام تھا مگر داعش اس سے بھی بڑا نام ہے۔ انھوں نے کہا کہ افغان طالبان کو مذاکرات کی میز پر واپس نہ لایا گیا تو وہ داعش سے اتحاد کر سکتے ہیں، اس لیے افغانستان میں مصالحت بہت ضروری ہے اور اگر یہ ٹھیک طرح سے نہ کیا گیا تو طالبان کے بعض دھڑے داعش میں شمولیت بھی اختیار کرسکتے ہیں۔

جھو ٹ کی سیا ست ہما را راستہ نہیں روک سکتی : مسلم لیگ ن 11اکتوبر کو دھا ندلی کو روکیں گے: تحریک انصاف

سلم لیگ (ن) نے ہمیشہ امپائروں کو ساتھ ملا کر میچ کھیلا، چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کو ملک کے ساتھ ساتھ لاہورکی ترقی بھی پسند نہیں،ایاز صادق

سلم لیگ (ن) نے ہمیشہ امپائروں کو ساتھ ملا کر میچ کھیلا، چیئرمین تحریک انصاف
عمران خان کو ملک کے ساتھ ساتھ لاہورکی ترقی بھی پسند نہیں،ایاز صادق

لاہور: سابق اسپیکر قومی اسمبلی اور مسلم لیگ(ن) کے رہنما ایاز صادق کا کہنا ہے کہ ضمنی انتخابات میں تحریک انصاف کومستقبل کانقشہ نظرآچکا ہے جب کہ مسلم لیگ(ن) کے شیر اپنی نشست کا دفاع کرنے کے لئےتیار ہیں۔

لاہور میں انتخابی جلسے سے خطاب کرتے ایاز صادق کا کہنا تھا کہ  (ن) لیگ کا شیراپنی سیٹ کادفاع کرنے کوتیارہے جب کہ 11 اکتوبر کو این اے 122 کا فیصلہ تاریخی ہوگا اور اس دن پاکستان جیتے گا لیکن اس کے بعد بھی رونے والے روتے رہیں گے کیونکہ ضمنی انتخابات میں تحریک انصاف کومستقبل کانقشہ نظرآچکا ہے اور عمران خان کواپنی شکست نظرآرہی ہے جب کہ عمران خان 2018کے الیکشن سے بھی خوفزدہ ہیں۔.ایاز صادق نے کہا کہ نوازشریف نے دہشت گردی کے خلاف جنگ شروع کی جب کہ  عمران خان کو خطرہ ہے چینی سرمایہ کاری آگئی توان کا کیا بنے گا کیونکہ ملک کے ساتھ ساتھ عمران خان کو لاہورکی ترقی بھی پسند نہیں۔ انہوں نے کہا کہ خود پی ٹی آئی کے آدھے درجن ارکان اسٹے آرڈرلے کربیٹھے ہیں اس لیے اب دہرے معیار اوردھرنوں کی سیاست مسترد ہوگئی ہے۔

اس موقع پر خواجہ سعد رفیق کا کہنا تھا کہ  لاہورکے شیرجاگیں توگیدڑبھاگ جاتے ہیں، لاہورکی گلیاں کوچے ہمارے ہیں اور ہم ان کے ہیں لہذا الزمات جھوٹ اوربہتان ہمارا راستہ نہیں روک سکتے۔ ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف اورشہبازشریف نے پاکستان کی معیشت کو پیروں پرکھڑا کیا، امریکا کا دباؤ قبول نہیں کیا بلکہ پاکستان کوایٹمی طاقت بنایا جب کہ کراچی کے بھتہ خوروں پرہاتھ ڈالا اور اب دہشت گردی کے خلاف فیصلہ کن جنگ لڑرہے ہیں لیکن پاکستان کی خوشحالی پرعمران خان کے پیٹ میں مروڑ اٹھتے ہیں اور عمران خان کی سیاست نے پاکستان کی سیاست کو نقصان پہنچایاہے۔

خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ  عمران خان کہتے ہیں کہ اسمبلی جعلی ہے اگر اسمبلی جعلی ہے تو اس میں رہنے کے لئے مرے کیوں جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان خیبرپختونخوا کے حکمراں ہیں وہ اگر نیا پاکستان بنانا چاہتے ہیں تو پہلے وہاں بنائیں ،بڈھ بیر میں جو سانحہ پیش آیا ادھر وزیراعظم اورآرمی چیف تو موجود تھے لیکن عمران خان حلقہ این اے 122 کا رونا رو رہے تھے۔

لاہور: تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ مسلم لیگ (ن) نے اس بار خواتین کے پولنگ اسٹیشنز میں دھاندلی کامنصوبہ بنایا ہے تاہم اس بار ہم دھاندلی روکنے کے لئے مکمل تیار ہیں۔

لاہور کے علاقے سمن آباد کے ڈونگی گراؤنڈ میں انتخابی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے ہمیشہ امپائروں کو ساتھ ملا کر میچ کھیلا، (ن) لیگ کے کئی لوگوں نے تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی جنہوں نے اہم انکشاف کئے جس کے بعد ہماری تیاری اور بہتر ہوگئی ہے، تحریک انصاف میں آنے والے افراد نے انکشاف کیا کہ مسلم لیگ (ن) نے اس بار خواتین کے پولنگ اسٹیشنز پر دھاندلی کا پروگرام بنایا ہوا ہے تاہم ہماری خواتین بھی دھاندلی روکنے کو تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک اور جادو پولنگ ختم ہونے کے بعد تھیلوں کی منتقلی کے دوران ہوتا ہے اور گاڑی میں ہی تھیلوں کو بھردیاجاتا ہے تاہم الیکشن کمیشن سے مطالبہ ہے کہ جب ریٹرننگ افسران گاڑی میں تھیلے منتقل کریں اس دوران گاڑی میں بھی ایک ایک فوجی دیا جائے اور ساتھ ہی ہر گاڑی کے ساتھ تحریک انصاف کے 5،5 کارکن موٹرسائیکلوں پر جائیں گے۔

چیرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ این اے 122 میں انصاف لینے کے لئے مجھے ڈھائی سال لگ گئے جب کہ ووٹوں کی تصدیق کرنے کے لئے نادرا کو 26 لاکھ روپے اور وکیلوں کو الگ پیسے دیئے جس کے بعد پتہ چلا کہ 53 ہزار ووٹ جعلی ڈالے گئے لیکن اتنا بڑا جرم کرنے اور لوگوں کا مینڈیٹ چوری کرنے پر کسی ایک شخص کو بھی سزا نہیں ہوئی اور جس نے 2013 کے انتخابات میں دھاندلی کی وہی عملہ پھر الیکشن کرا رہا ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ خیبرپختونخوا میں احتساب اور نیب آزاد ہے جب کہ پنجاب کا نیب کرپشن ختم نہیں کرسکتا، نیب نے سپریم کورٹ کو اپنی رپورٹ میں بتایا تھا کہ ان کے پاس کرپشن کے 180 کیسز موجود ہیں جس میں کرپٹ افراد نے ملکی خزانے کو 2 ہزارارب روپے کا ٹیکہ لگایا جب کہ ان کیسز میں سے 12 کیسز میاں نواز شریف، ایک کیس شہباز شریف، ایک کیس اسحاق ڈار اور ایک کیس اپوزیشن لیڈرخورشید شاہ کے خلاف ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نواز شریف اور اپوزیشن لیڈر خورشید نے نیب کے سربراہ کا انتخاب کیا تو وہ کس طرح کرپشن الزامات میں انہیں پکڑیں گے، 2008 میں فی پاکستانی پر36 ہزارروپے قرضہ تھا اورآج ایک لاکھ ایک ہزار تک پہنچ چکا ہے۔

چیئرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نواز شریف نے پی آئی اے کا طیارہ بوئنگ 777 پندرہ روز کے لئے مانگا ہے جس سے ادارے کو 25 کروڑ روپے کا نقصان ہوگا اور اس نقصان کا ازالہ عوام کو ٹیکس کی صورت میں کرنا ہوگا، جب تک یہ نظام صحیح نہیں ہوتا اس وقت تک  ملک کو ناانصافی کے دلدل سے نہیں نکالا جاسکتا۔ ان کا کہنا تھا کہ نئے پاکستان کا مطلب نیا نظام ہے جو لاکر دکھائیں گے، ثابت کر کے دکھائیں گے کہ یہ قوم خوددار اور عظیم ہے اور تحریک انصاف پاکستان کو فلاحی ریاست بنا کر دکھائے گی، عوام سے لیا جانے والا ٹیکس بڑھایا نہیں جائے گا بلکہ ہر فرد خوشی سے ٹیکس دے گا جسے عوام پر ہی خرچ کیا جائے گا۔